ChitralToday The Voice of the Voiceless Tue, 13 Oct 2015 10:21:58 +0000 en-US hourly 1 Disabled man protest against lawyers Tue, 13 Oct 2015 08:24:07 +0000 Read more ↪ ]]> Report SN Peerzada
BOONI, Oct 13: A disabled man on Tuesday protested by sitting in the middle of the road in Booni bazaar along with his three small children after his wife took Khula from a local court.Akhtar
After the ruling by the court, the wheelchair-bound Akhtar Azam of Morder in Mulkhow came out of the courtroom and started shouting at the lawyers of his ex-wife for what he said rendering his three small children orphans.
He alleged that on his protest, the lawyers of his ex-wife also manhandled him in the middle of the road. Azam continued sitting on the road along with his children and was later persuaded by the local people to go home.
It may be noted that in 2001 Akhtar Azam entered into a love marriage with Ms Fouzia of Muzgol. A few years ago, however, Azam fell from the wall of his house and got both his legs paralyzed. After he became disabled, his wife left her and sought Khula from the court of law which was pending adjudication.
On Tuesday, the court announced its verdict and gave Khula to the woman. The couple have three children.
A lawyer told ChitralToday that under the law, a woman can move a court and take divorce from her husband.

]]> 4
Lowari tunnel may not be opened this winter Tue, 13 Oct 2015 07:38:21 +0000 Read more ↪ ]]> CHITRAL, Oct 13: Because of the current development work on Lowari tunnel, including the installation of formwork inside the passageway, passengers may not be allowed to use it during the closure of the Lowari pass road in the winter.lowari_0
The development has turned the general public in Chitral apprehensive as the tunnel provides the only way of passage to the residents of Chitral when the Lowari top road is closed after snowfall. The installation of formwork inside the tunnel means its total closure for vehicular traffic till the removal of the shuttering which may take more than nine months.
District nazim Maghfirat Shah said the people of Chitral would die of famine if the tunnel was closed in the winter season to traffic as the commodities of daily consumption run out in the absence of replenishment.
He said the choice of the timing for formwork was inappropriate as there was no other route available to connect Chitral with the rest of the country after the Lowari top road was closed in early December to be reopened in the month of May next year.
The people of Chitral said that instead of blocking the tunnel by formwork, work on the construction of approach roads should be started during the winter season as it would not affect the connectivity of Chitral by land with the rest of the country.
The work on widening of Lowari tunnel will be completed within 40 days, according to official sources. A project official told this scribe that only 400 meters out of the 8.5 kilometres were left that would be completed within 40 days after which lining concrete would be started. He said that installation of formwork was already completed on both — south (Dir Upper) and north (Chitral) — portals of the tunnel. He said that the tunnel had originally been designed as rail tunnel which was later on modified to road tunnel requiring the widening of the tunnel by 2.5 meters.
The official said that the lining work was the finishing of the interior structure of the tunnel after which electrification would be carried out and the tunnel would be opened to public transport.
Work on the 20km approach road on both sides of the tunnel is yet to be started while the bridge over the stream at the south portal is yet to be completed.–Zahiruddin

]]> 0
Public awareness for voting emphasized Tue, 13 Oct 2015 06:26:45 +0000 Read more ↪ ]]> PReport Gul Hamaad Farooqi
CHITRAL, Oct 13: A formation meeting of the District Electoral Reform Group (DERG) was held at Rural Community Development Program office under the chair of Ghazala Afzal, its coordinator. poll
The program was organized by the Holistic Understanding for Justified Research and Action (HUJRA).
Briefing the members, Ghazala Afzal said DERG is running under the auspices of HUJRA to work for creating sensitization and awareness among the voters to ensure fair and transparent elections.
She said that a true leader can bring changes and revolution in the society. Under this program, the public will be made aware of the value of their vote. They must be sensitized to use their vote for such a leader who plays a vital role in development of the country.
Engineer Temour Shah said the group will be fully facilitated in terms of training, workshops, seminars etc., to prepare it for creating awareness among the people to cast their vote in support of deserving candidates. He said that a media campaign will also be run under this program. The group comprises lawyers, journalists, elected councilors, nazims and social workers.

]]> 0
BUT WHO CARES! Tue, 13 Oct 2015 06:17:33 +0000 Read more ↪ ]]> حکومت اور انتظامیہ کی بے حسی اور اپنے فرائض سے غفلت کا اس سے بڑ کر بھلا کیا ثبوت هو سکتا ھے کہ آج ان کے ناک نیچے دروش بازار سے منسلک ہر نالی ابل کر نہ صرف گٹر کا منظر پیش کر رہا ھے بلکہ ابال اور تعفن کی وجہ سے راہ گیروں کے لئے وبال جان سمیت جراثم کی پیدائش اور افزایش کا سبب بن کر مختلف بیماریوں کا مواجب بن رہا ھے انتظامییہ کو چاہیے کہ جلد از جلد صفایی کا کام شروع کر کے صحت کے انصاف کے ساتھ انصاف کیا جایے تا کہ عوام کو بیمارؤں سے پاک صاف ستھرا ماحول میسر آیے nullah
Photo & text by Abbas Hussain Chitrali

]]> 0
Alleged drug peddlers held Tue, 13 Oct 2015 05:12:36 +0000 Read more ↪ ]]> CHITRAL, Oct 13: The Chitral police arrested 18 drug peddlers and a proclaimed offender and seized drugs from their possession in the district on Monday.
A press release quoting District Police Officer (DPO) Abbas Majeed Khan Marwat said the police conducted raids on the suspected places in Ayun, Chitral town, Drosh and Shishi Koh.
He said that the police arrested 18 drug-peddlers and a proclaimed offender Ziauddin, adding that three kilogram hashish and 11 litres liquor were also seized from their possession.

]]> 0
Former XEn granted bail Tue, 13 Oct 2015 04:10:11 +0000 Read more ↪ ]]> Ex-Xen released
PESHAWAR: The Peshawar High Court (PHC) has granted bail to a former executive engineer (XEN), who was arrested over alleged corruption in the Golen Gol hydropower project, Chitral.
During hearing of Amanullah’s bail application, the court was told that the accused had been arrested in a case pertaining to use of substandard material in establishment of the Golen Gol residential colony because he did not forward a report on the poor material to other authorities.
The petitioner’s lawyer said because the project engineers and other employees had been released on bail, his client should also be released. After hearing arguments, the court released Amanullah on two surety bonds of Rs1 million.–The News

]]> 0
Founding members say paragliding association hijacked Mon, 12 Oct 2015 17:09:57 +0000 Read more ↪ ]]> چترال ( بشیر حسین آزاد ) ہندو کُش ایسوسی ایشن فارپیراگلائڈنگ (ہیکاپ)کے بانی ممبران اور عہدہ داروں نے دعوی کیا ہے ۔ کہ بونی میں قائم کردہ اس پیراگلائڈنگ ایسوسی ایشن کو چترال کے چند مفاد پرست عہدہ داروں نے اپنے اثرو رسوخ اور دھوکا دہی کی بنیاد پر ہائی جیک کیا ۔ اور چترال میں پیرا گلائڈنگ کی ترقی کیلئے ملنے والی فنڈ کو خرد برد کرکے اس کو نا قابل تلافی نقصان پہنچایا ۔
چترال پریس کلب میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ایسوسی ایشن کے بانی ممبران ظہیرالدین بابر ، سید مظفر خان ، جنرل سیکرٹری سرور خان ودیگر نے کہا ۔ کہ ایسوسی ایشن کی رجسٹریشن اور جملہ دستاویزات بطور ریکارڈ اُن کے پاس موجود ہیں ۔ جس میں واضح الفاظ میں ہیکاپ کی رجسٹریشن بونی کے پتے پر کی گئی ہے ۔ لیکن بدقسمتی سے جن پر اعتماد کرکے صدر کا عہدہ انہیں تفویض کیا گیا ۔HIKEP
انہوں نے ایسوسی ایشن کے قواعدکی دھجیاں اُڑا کر نہ صرف ملنے والے فنڈ میں بڑے پیمانے پر کرپشن کی ۔ بلکہ غیر قانونی طور پر چترال میں اپنے دوستوں کو ایسوسی ایشن میں جگہ دی ۔ اور اصل ممبران کو کو کھڈے لائن لگا دینے کی ناکام کوشش کی ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ سابق صدر سیف اللہ جان اور شہزادہ فرہاد عزیز مجموعی طور پر ایسو سی ایشن کے بیس لاکھ روپے کے فنڈ ہڑپ کر گئے ہیں ۔ جبکہ یہ فنڈ پائلٹوں کیلئے گلائڈر ز کی خریداری اور دیگر سہولیات کی فراہمی کیلئے دیا گیا تھا ۔
انہوں نے کہا ۔ کہ ان کے اس اقدام کے خلاف ضلعی انتظامیہ اور دیگر حکام کو بھی آگاہ کر دیا گیا ۔ لیکن مذکورہ افراد اپنے اثر و رسوخ اور تعلقات کی بنیاد پر خود کو بچانے میں تاحال کامیاب رہے ہیں ۔ ظہیر الدین نے کہا ۔ کہ سرکاری سطح پر ملی بھگت سے ہم پر دباؤ ڈالنے ، ہراسان کرنے اور پھنسانے کیلئے انکوائری کا آغاز کیا گیا تھا ۔ لیکن تمام تر عمل خود اُن کے خلاف جانے کی وجہ سے یہ انکوائری روک دی گئی ۔اور کرپشن کے مر تکب عناصر کو بچا لیا گیا ۔
انہوں نے کہا ۔ کہ اُس انکوائری کو سامنے لایا جائے ۔ تاکہ دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہو جائے ۔ انہوں نے کہا ۔ ہیکاپ اپنا قا نونی حق محفوظ رکھتا ہے ۔ اور ہیکاپ کے نام پر چترال میں پیراگلائڈنگ کا کوئی بھی دوسرا ایسوسی ایشن قانونی طور پر غلط اور قواعد و ضوابط کے خلاف ہے ۔ جبکہ اصل ہیکاپ ایک رجسٹرڈ ایسوسی ایشن ہے۔ جس کا نام ، وسائل اور مراعات کو استعمال کرنے کا حق کسی دوسرے کو نہیں پہنچتا۔

]]> 0
ایون میں آگ لگنے سے دیودار کے درخت خاکستر Mon, 12 Oct 2015 17:07:00 +0000 Read more ↪ ]]> چترال ( بشیر حسین آزاد ) چترال کے خوبصورت گاؤں ایون کے جنگل سنجریت میں آگ لگنے سے سینکڑوں دیودار کے درخت جل کر خاکستر ہو گئے ہیں ۔ اور جنگل کی آگ میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے ۔
چترال شہر سے پچیس کلومیٹر دور ایون کے جنگل میں گذشتہ روز آگ لگی ۔ جس نے بتدریج ایک بڑے ایریے کو اپنی لپیٹ میں لے لیا ۔ اور کئی درخت جل کر نیچے گرنے سے آگ کے انگارے دور دور تک بکھر کر جنگل کی آگ میں اضافے کا سبب بنے ۔ اور یوں جنگل کا ایک بڑا حصہ اس آگ کی لپیٹ میں آگیا ہے ۔ ایس ڈی ایف او چترال محمد آصف نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے اس بات کی تصدیق کی ۔ کہ جنگل میں آگ لگی ہوئی ہے ۔ جس کے نتیجے میں دیودار کے درختوں کو نقصان پہنچا ہے ۔
تاہم متاثرہ درختوں کی تعداد سینکڑوں میں نہیں۔ بلکہ بارہ درخت آگ لگنے سے جل گئے ہیں ۔ محکمہ فارسٹ کے سات اسٹاف اور مقامی کمیونٹی سے تعلق رکھنے والے پندرہ افراد جنگل میں آگ بجھانے میں مصروف ہیں ۔ اُن کے مطابق آگ قابو میں ہے ۔ تاہم ایک بڑے درخت کے جل کر گرنے کا انتظار ہے ۔ اور آگ بجھانے والوں نے اُن کے انگاروں اور شعلوں کو کنٹرول کرنے کیلئے دائرے کی شکل میں خندق کھود لی ہے ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ آگ کمپارٹمنٹ نمبر 5جنگل سنجریت میں لگی ہے ۔ جبکہ اس سے دو دن پہلے اسی جنگل کے کمپارٹمنٹ نمبر 2میں بھی آگ لگی تھی ۔ جسے ایس ڈی ایف او کے مطابق بجھا دیا گیا ہے ۔
انہوں نے آگ لگنے کی ذمہ داری مقامی کمیونٹی کے افراد پر ڈالتے ہوئے کہا ۔ کہ حالیہ دنوں میں علاقے کے افراد چلغوزہ جمع کرنے اور جلانے کی لکڑی کاٹنے کے لئے جنگل سنجریت آتے ہیں اور جنگل میں آگ جلاکر خوراک وغیرہ تیار کرتے ہیں ۔ اور جاتے ہوئے آگ کو بجھانے میں غفلت کرتے ہیں جس کی وجہ سے یہ آگ بتدریج جنگل کو اپنی لپیٹ میں لے لیتا ہے ۔ اور یہ واقعہ بھی اس سلسلے کی ایک کڑی ہے ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ غفلت کے مرتکب افراد کی تفتیش کی جارہی ہے ۔ جن کے خلاف قانونی کاروائی کی جائے گی ۔ واضح رہے ۔ اسی جنگل میں اس سے قبل بھی غفلت یا دانستہ طور پر کئی مرتبہ آگ لگ چکی ہے ۔ اور اس جنگل کے ہزاروں دیودار کے درخت اب تک آگ کی بھینٹ چڑھ چکے ہیں ۔
یہ واقعات مقامی کمیونٹی کی بے حسی اور محکمہ فارسٹ چترال کی نااہلی کی وجہ سے بار بار رونما ہورہے ہیں ۔ اور ایسے قومی مجرموں کو کیفر کردار تک پہنچانے کیلئے کوئی کاروائی ابھی تک نہیں کی گئی ۔

]]> 0
Displaced people of Brep warn against discrimination Mon, 12 Oct 2015 07:21:56 +0000 Read more ↪ ]]> چترال(بشیر حسین آزاد)سب ڈویژن مستوج کے دور آفتادہ اور پسماندہ علاقہ بریپ کے سیلاب سے متاثرین نے حکومت کی سرد مہری اور مسائل کے حل میں عدم دلچسپی پر نہایت دکھ اور افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ بریپ گاؤں میں قیامت صغریٰ برپا ہوگئی اور 90گھرانے مکمل طورپر اور 120گھرانے جزوی طوپر برباد ہوگئے اور ہزاروں افراد کھلے اسمان تلے رہ گئے ہیں لیکن حکومت کی طرف سے اب تک صرف چند کلو گرام آٹا،گھی اور دال کی سوا کچھ نہیں ملا۔
Brepچترال پریس کلب میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے یارخون ویلی کے عمائدین میر رحیم،شکیل احمد،حکیم بابر الدین اور صاحب نادر ودیگر نے کہا کہ متاثرہ گھرانے کے لوگوں کے لئے آنے والے سردیوں میں پناہ کی کوئی جگہ نہیں جوکہ فی الحال خیموں میں رہتے ہیں اور برفباری میں خیموں کے اندر قیام ممکن نہیں۔اُنہوں نے کہا کہ علاقے میں بھوک اور افلاس نے ڈیرے ڈال دیا ہے۔کیونکہ سیلاب نے ان کا سب کچھ تباہ کرکے رکھ دی ہے۔ اگر ان کی مزیدکوئی شنوائی نہیں ہوئی تو وہ بال بچوں کے ساتھ ڈی سی ہاؤس کے سامنے دھرنا دیکر بیٹھنے پر مجبور ہونگے۔اُنہوں نے کہا کہ ورلڈ فوڈ پروگرام نے بریپ گاؤں کو اپنے پیکیج میں شامل کرنے کا اعلان کیا تھا لیکن اب بریپ گاؤں کوِ لسٹ سے نکال دینے کی خبریں آرہی ہیں جوکہ ناقابل فہم بات ہے کیونکہ اس ضلع میں سب سے زیادہ متاثرہ گاؤں بریپ ہے۔بریپ کے متاثرین سیلاب نے کہا کہ گاؤں کے سرکاری گدام میں گندم موجود ہے لیکن اسے خریدنے کے لئے ان کے پاس پیسے نہیں ہیں،جبکہ ورلڈفوڈ پروگرام بھی ان کو امداد دینے سے انکاری ہے۔اور اس خبر نے گاؤں میں مایوسی کی لہر پھلادی ہے۔
اُنہوں نے کہا کہ ضلعے کے منتخب نمائندے ایم این اے شہزادہ افتخار الدین اور ایم پی اے سردار حسین نے علاقے کا دورہ کرکے بڑے بڑے وعدے کئے لیکن اب تک کوئی بھی وعدہ پورا نہیں ہوااور ان کے مسائل دن بدن بڑھتے جارہے ہیں۔اُنہوں نے کہا کہ آبنوشی اور آبپاشی کے تمام نظام اور انفراسٹرکچر سیلاب برد ہوچکے ہیں۔جن کی بحالی کے بغیر ان کی زندگی ممکن نہیں ہے۔جبکہ ان کی بحالی عوام کی بس سے باہر ہے۔اہالیان بریپ نے یہ بھی مطالبہ کیا کہ ان کو کاغ لشٹ میں زمین الاٹ کرکے ان کی آباد کاری کی جائے کیونکہ بریپ گاؤں میں متاثرہ گھروں کی جگہوں میں دوبارہ تعمیر ممکن نہیں ہے اور دوبارہ گھر تعمیر کرنے پر اگلے سال دوبارہ سیلاب برد ہونے کا قوی خطرہ موجود ہے۔اُنہوں نے بتایا کہ سیلاب کے بعد ایک مہینے تک سب ڈویژن مستوج روڈبند رہی جس کی وجہ سے علاقے کے عوام مختلف این جی اوز اور مخیر حضرات کے امداد ی سامان سے بھی محروم رہے اوراب سیلاب متاثرین کے پاس صرف ایک ایک عد د ٹینٹ کے سوا کچھ بھی نہیں جبکہ بعض متاثرین مذکورہ ٹینٹ بھی بھیجنے پر مجبور ہیں۔

]]> 0
Racing for publicity stunt? Sun, 11 Oct 2015 17:28:23 +0000 Read more ↪ ]]> Report Bashir Hussain Azad
CHITRAL, Oct 11: As nothing tangible is coming for the rehabilitation of the flood-affected people of Chitral from the government side, local political leaders have confined themselves to issuing statements, holding press conferences and getting worthless resolutions passed through the KP assembly.


And if there is a chance available, they are also racing for publicity stunts notwithstanding the miseries and agonies the flood-affected people have been undergoing since the calamity hit them over three months ago with no prospects of being helped either.
On Sunday, MNA Iftikhar Uddin reached the Kalash valley along with officials of the district administration, Focus humanitarian organization and the AKRSP to hand over a bags of wheat flour and some other food items donated by the World Food Programme (WFP) to the flood-hit families.
It may be noted that for the distribution of the food items provided by the WFP, the AKRSP prepared a list of 3,375 families in the Kalash valleys of Bumburate, Rumbur as well as Reshun and Mulkhow. The task to distribute the food items among the families has been given to the Focus humanitarian agency.
But the displaced people of Brep, which was the worst-affected village, in upper Chitral were excluded from the list due to unknown reasons.
Besides the MNA as chief guest, those who attended the food items distribution ceremony in Bumburate on Sunday included additional DC Chitral Abdul Ghafar, WFP coordinator for KP Umair Lodhi, manager IT AKRSP Fazal Malik, manager AVDP Wazir Zada, manager Focus Chitral Amir Muhammad and consultant Shujaat Ali.
Speaking on the occasion, the Focus manager said the food items were being distributed among the flood-hit people as a compensation for the work they carried out on a self-help basis for the rehabilitation of their houses and other infrastructure. He said 934 families in Bumburate were being given the food items for three months. Initially it was decided that the WFP food items would be provided to 16,000 families and the proposal is still being looked into, he added.
MNA Iftikhar Uddin said the floods had caused such a large-scale destruction in Chitral that billions of rupees were needed for the reconstruction activities. He said when Prime Minister Nawaz Sharif visited Chitral, the estimate of the reconstruction was Rs1 billion but after his visit more floods brought more devastation, taking the total needed amount for the reconstruction to over Rs6 billion.
He told the flood-affected people to continue the reconstruction work in accordance with their capacity, adding, “We will be working hard for getting funds for mega projects.”
Amadan, nishashtan, guftan, barkhastan

Amadan, nishashtan, guftan, barkhastan

]]> 2
Conflict resolution mechanisms and the NGO dilemma Sun, 11 Oct 2015 15:35:06 +0000 Read more ↪ ]]> By Muhammad Amin Baloch
NGOs have been playing an important role in support of government initiatives in addressing poverty and human rights issues around the world, especially in the developing and underdeveloped countries, where these issues are entrenched and chronic. Typically the role of NGOs has been serving the disadvantaged, empowering them, strengthening democratic norms and proper exploration and management of available natural resources etc.
Pakistan has witnessed a mushroomed growth of international and national NGOs since the 1970s .Some of these NGOs have taken a lead role in addressing issues such as poverty, human rights, democratization, financial and fiscal issues of the country.
conflictIt is also an acknowledged fact that NGOs` role has been essential in Chitral. Being a remote and backward area, government intervention has been minimum in Chitral. Since early ‘80s, different reputed NGOs have been engaged in the rural development of Chitral in developing and improving infrastructures, access to education (especially females), provision of basic health facilities, sensitizing and capacity building of the local community and natural resources management.
Donor intervention can do harm as well as good, for example, by inadvertently creating social division or increasing corruption if they are not based on strong conflict resolution and governance analysis and mechanisms and designed with appropriate safeguards. As donors can do good as well as harm is universally accepted as any intervention or policy can bring unintended negative impacts. Basically, donors are pumping huge resources into situations which attract political and other influential players into the field. So if aid is intended to be neutral there is the possibility even in humanitarian aid of causing conflict for different reasons.
Conflict sensitivity can be defined the capacity of an organization to understand the conflict (context) in which it operates, to recognize the interaction between its operations and that context and to minimize its negative impacts and maximize its positive impacts. Basically conflict sensitivity avoids harm and promotes the holistic Do No Harm Policy in interventions.
The most obvious way donors may do harm is if their actions (interventions, policy or position) may increase conflict or potential for conflict. According to Mary Anderson “aid can undermine structures and relationships in society that enable people to live together peacefully (connectors) or conversely it can enhance the factors that push people apart (dividers).
As I had highlighted in my previous article titled “NGOs role in the rural development of Chitral” that being a leading development organization in Chitral AKRSP is completely void of any conflict resolution mechanism. Or if it is existed only in documents never has been used. The publication of the recent news in ChitralToday in which the community of the Yurjogh cluster in Garam Chashma expressed full distrust over AKRSP and the concerned Local Support Organization for their failure to handle the cluster micro-hydel powerhouse scheme. Unfortunately, according to the community representatives, these organizations have pitched the community against each other as a result of their biased approach to handle the issue.
This is not the first incidents of its kind. In the past, similar incidents did occur and on several occasions the conflicting parties resorted to the court of law to settle the disputes caused by AKRSP interventions. I have witnessed with my own eyes auctioning of poor people property (cultivable lands). If there has been a strong conflict resolution mechanism at the disposal of AKRSP, such incidents could have been resolved easily.
It is to be acknowledged that the high ups of AKRSP in Chitral region are honest and cooperative but, unfortunately, they are miscommunicated or rather misguided by the subordinate staff about the ground realities. Some of these staffs are arrogant and uncompromising like the Local Support Unit inside the organization.
I have a good experience of working with reputed donor organizations and those development actors consider conflict resolution as a main component of their holistic approach efforts. One of such organizations is Intercooperation (IC), a Swiss Funded NGO, which attaches great sanctity to conflict resolution mechanism/assessment in its interventions. I remember once there was a minor conflict in lower Chitral between some community members and the implementing partner. It was taken so seriously by the IC management that they immediately rushed to Chitral to hold a meeting with the disputing parties. They conducted a transparent enquiry and resolved the issue peacefully without creating any incoherence in the stakeholders. Latter, during a four-day workshop held in Islamabad on CSPM (Conflict Sensitivity Programme Management) and ‘Do no harm policy’ the incident was given so much importance that it was placed on top in the sources of tension (SOTs) assessment.
Ideally speaking, such a mechanism can help build a peaceful society where community can live in a harmonious and prosperous way. AKRSP being a leading development player in the area must have such an essential mechanism to avoid or at least minimize conflicts amongst the target groups and other stakeholders, where it operates. Then we can say that it is on the way of accomplishing its true vision, as envisioned by its founder, a great humanitarian.

]]> 0
وزیر اعلیٰ کا فقید المثال استقبال کیا جائے گا۔ضلع ناظم Sun, 11 Oct 2015 14:26:37 +0000 Read more ↪ ]]> چترال (بشیر حسین آزاد) ڈسٹرکٹ ناظم چترال مغفرت شاہ نے کہا ہے کہ صوبائی حکومت نے نومنتخب بلدیاتی اداروں اور ان کے نمائندوں کو حقیقی معنوں میں بااختیار بنانے کے لئے ان کو اختیارات کی منتقل کرنے میں سنجیدہ اور مخلص ہے جس کی نظیر ملک کی سیاسی اور بلدیاتی تاریخ میں نہیں ملے گی اور اس سب کا براہ راست اورمثبت اثر عام آدمی تک پہنچ جائے گا ۔ nazim
اتوار کے روز چترال میں نومنتخب اراکین ضلع و تحصیل کونسل اور ویلج کونسل کے ناظمین کی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک نے چترال کی پسماندگی دور کرنے کے لئے چترال ڈیویلپمنٹ اتھارٹی کا قیام عمل میں لانے جبکہ تعلیمی ضروریات کے لئے ایک الگ یونیورسٹی اور تعلیمی بورڈ قائم کرنے کا بھی وعدہ کیا ہے جس کا باضابطہ اعلان وہ اگلے ہفتے اپنے دورہ چترال میں کریں گے۔
انہوں نے کہاکہ ڈیویلپمنٹ اتھارٹی چترال کے نومنتخب نمائندگان بلدیات کے لئے ایک تحفہ ہے جوکہ اس علاقے کو ترقی سے ہمکنار کرنے میں کردار ادا کرے گا۔ ضلع ناظم نے کہاکہ وزیر اعلیٰ پرویز خٹک کا چترال آنے پر فقید المثال استقبال کیا جائے گاجوکہ اگلے ہفتے متوقع ہے۔ انہوں نے کہاکہ چترال ڈیویلپمنٹ اتھارٹی کے علاوہ ایک ملٹی بلین ڈالر مالیت کا ترقیاتی پراجیکٹ بھی مختلف غیر ڈونر ایجنسیوں کی مدد سے لانچ کیا جارہا ہے اور اپنے ساتھ ملاقات میں وزیر اعلیٰ نے اس بارے میں بھی گرین سگنل دے دیا ہے تاکہ چترال کی ہمہ گیر ترقی اور تاریخ کے بدترین سیلاب میں تباہ شدہ انفراسٹرکچر کی بحالی ممکن ہو۔ nazim1
مغفرت شاہ نے زور دے کرکہاکہ چترال کی ترقی میں تمام ممبران اسمبلی کے ساتھ قریبی رابطہ کار بڑہاکر ان کو ہر ایک پراسس میں شامل کیا جائے گا ۔ انہوں نے کونسلروں اور ویلج ناظمیں سے کہاکہ وہ اپنی حیثیت کی پہچان اپنے اندر پیدا کریں کہ وہ گراس روٹ لیول کے منتخب نمائندے ہیں اور عوام کے بنیادی مسائل کا حل بھی ان کی ذمہ داری ہے۔ اس موقع پر ممبران ضلع عبداللطیف، مفتی محمودالحسن، محمد حسین، ریاض احمد دیوان بیگی، شیر محمد جبکہ چالیس سے ذیادہ ویلج کونسلوں کے ناظمیں موجود تھے۔

]]> 0
Villagers stage sit-in against leasing out of their land Sun, 11 Oct 2015 14:19:02 +0000 Read more ↪ ]]> CHITRAL, Oct 11: Scores of people from Ragh village continued their sit-in for the second consecutive day in the Chitral town on Sunday against leasing out of their land located along the river to a Korean company for extraction of construction material.Raagh
They said the land along the river is their ancestral property but the district administration and the mines department declared it a riverbed and leased it out to the foreign company which was taking away sand and crushed stones from the area.
The river has all along been eroding private land right from Boroghil to Arandu that cannot be declared public property under any law. Moreover, even riverbed cannot be used by any entity for comemrcial purposes.
The villagers said they would not tolerate this daylight robbery on their property.
On Sunday, District Nazim Maghfirat Shah visited the protesters in front of Town Hall and assured them that no injustice would be done with them. He said that the matter would be taken up with the department concerned to find out a solution to it.—Bashir Hussain AZad

]]> 0
Artists gather to help needy patients Sat, 10 Oct 2015 17:42:39 +0000 Read more ↪ ]]> Report SN Peerzada
BOONI, Oct 10: The Aga Khan Health Service organized a special literary and cultural programme to collect funds for the deserving patients here on Sunday night.
musicKnown poets of Chitral were invited to the event, called “Ek sham zaruratmand marizon k saath” in which the MNA Chitral was chief guest.
Watch video of the program at this link:
Poets who attended the programme included Fazlur Rehman Shahid, Zakir Muhammad Zakhmi and Allauddin Urfi.
Khowar artists Mansoor Ali Shabbad, Ansar Elahi, Mohsin Hayat and Ziyad Wali performed on the occasion while a group of guest artists from Gilgit-Baltistan headed by famous poet Zafar Khaliq Taj also attended the event.
Comedian Abdul Jabbar, Afsar Ali and Fakhar Amin added colours to the event. Participants of a Mushaira on the occasion highlighted issues facing the society. A large number of people from all walks of life were present on the occasion.music2

]]> 0
مشرقی اور مغربی تہذیب کا فرق Sat, 10 Oct 2015 17:29:56 +0000 Read more ↪ ]]> ارشاد اللہ شادؔ irshad
بکر آباد چتر ال
مشرق ومغرب کے تضاد اور مغرب کی برائیوں کے بارے میں ہم بہت سی باتیں کرتے ہیں اور مشرقی تہذیب کو سب سے بہتر اور اچھی تہذیب قرار دیتے ہیں۔ کیا مغربی تہذیب کو برُا کہنے سے ہم اپنی تہذیب اور اپنے معاشرے کی برائیوں کو چھپا سکتے ہیں یا اس بات کا دعویٰ کر سکتے ہیں کہ ہم اپنی مشرقی تہذیب اور اپنے معاشرے کی ہر ضرورت کو سچائی ، نیک نیتی ، اور ہر رشتے کو پوری ایمانداری سے نبھا رہے ہیں۔ ان سب باتوں کا جواب ہمیں خود ہی تلاش کرنا ہوگا تب کہیں جا کر ہم اپنی آپ کو مشرقی تہذیب اور انسانی رشتوں کی اہمیت اور ضرورت کو سمجھنے اور اسے پورا کرنے والا کہہ سکتے ہیں۔ ذیل میں اسی بات پر روشنی ڈالنے کی کوشش کی گئی ہے۔
ایک مفکر نے کہا تھا ’’مشرق ، مشرق ہے اور مغرب ، مغرب اور یہ دونوں کبھی باہم نہیں مل سکتے ۔ ہر آدمی کی ہر بات درست نہیں ہو سکتی ، لیکن یہ بات ضرور درست مانی جا سکتی ہے کہ واقعی مشرق کچھ باتیں مغرب کی کچھ باتوں سے قطعی مختلف ہیں ۔ کچھ خوبیاں ہماری مشرقی روایات اور اقتدار میں پائی جاتی ہیں ، کچھ اچھائیاں مغرب کے اصول پسند معاشرے کا لازمی اور بہترین حصہ ہیں ۔ مشرق اپنی اخلاقی قدروں اور روحانی پاکیزگی کے حوالے سے مغرب سے کہیں بلند ہے اور طریقہ ہائے زندگی کو درست طور پر چلانے میں مغرب ہم سے کہیں بہتر ہے۔
کہا جاتاہے کہ انگریز برصغیر سے جاتے ہوئے تین چیزیں لے کر گئیں : خوف خدا، قانوں کا احترام اور وقت کی پابندی ۔ اگر ہم اپنے معمولات زندگی پر نظر ڈالیں تو واقعی ہمارا دامن ان چیزوں سے خالی دکھائی دیتا ہے لیکن مغرب نے والدین کا احترام ، بزرگوں کی عزّت ، رشتے ناتوں کی اہمیت اور گھر گر ہستی جیسی انمول چیزوں کو کھو دیا ہے۔ اسلئے یہ بات کہی جا سکتی ہے کہ مشرق بہر حال مشرق ہے ۔ لیکن صرف چند اچھی باتوں پر۔۔۔۔۔۔۔ فخر کرنے سے ہم اپنی خامیوں کی پردہ پوشی نہیں کر سکتے۔ یہ بات ہمارے ذہنوں میں رہے کہ معاشرہ افراد سے تشکیل پاتا ہے۔ انسان کبھی اکیلا نہیں رہ سکتا۔ اسے اپنی زندگی بہتر اور محفوظ طریقے سے بسر کرنے کیلئے گروہ کی ضرورت ہوتی ہے۔ اس کا خاندان ، قبلہ ، قوم اور ملک اس کی اس ضرورت کو پورا کرنے میں اس کے ساتھ شریک ہوتے ہیں۔
انسان بلاشبہ ایک معاشرتی حیوان ہے۔ اس لیئے اسے اپنے دل کا حال سننے ، سنانے والا کوئی ہمدم ، کوئی ساتھی درکار ہوتا ہے۔ تارک الدّنیا ہو جانے سے،دنیا اہل ایمان کو رشتے نبھانے ، گھر بنانے ، خاندان کے ساتھ مل جل کر رہنے کی تلقین کی۔ کہا انسان ایک دوسرے کے دکھ درد بانٹ سکے، ایک دوسرے کی خوشیوں میں شریک ہو سکے۔ مشکلات میں ایک دوسرے کی مددکر سکے اور جب خود کسی پریشانی کا شکار ہو تو اسے چار لوگ حوصلہ دینے والے موجود ہوں۔ لیکن ذرا اپنے معاشرے کے مجموعی حالات پر نظر ڈالیں تو معاشرے کی حالت کچھ اور ہی نظر آتی ہے۔ ایسے ہی حالات پر مرزا غالبؔ کا یہ شعر صحیح ثابت ہوتا ہے۔
رہیئے اب ایسی جگہ چل کر جہاں کوئی نہ ہو
ہم سخن کوئی نہ ہو اور ہم زبان کوئی نہ ہو
اور معاشرے کے حالاتِ زار کو دیکھتے ہو ئے فیض کو اپنا درد ان لفظوں میں بیان کرنا پڑا۔
زندگی کیا مفلس کی قبا ہے جس میں
ہر گھڑی درد کے پیوند لگے جاتے ہیں
یہ کیفیت ہر اس درد مند اور حساس شخص کے دل پر طاری ہوتی ہے جو انسان کو انسان سے محبت کرتے ہوئے دیکھنا چاہتا ہے ۔ جب وہ انسان کو محض اولادِ آدم نہیں بلکہ شرفِ انسانیت سے بھی ہمکنار دیکھنا پسند کرتاہے ۔ مگر کیا ہمارا معاشرہ جس میں بے شمار خوبیاں ہیں واقعی اتنا ہی قابل ہے جتنا ہم کہتے ہیں یا سمجھتے ہیں۔ ہم گھر اور گر ہستی یعنی چادر اور چاردیواری کے تحفظ کی بات کرتے ہیں ۔
لیکن یہ ہمارا ہی معاشرہ ہے جہاں عورت اگر اکیلی ہو تو خود کو غیر محفوظ سمجھتی ہے ۔ اور اپنے حقیقی رشتوں کے ساتھ ہو تب بھی استحصال کا شکار ہوتی ہے۔ سچ یقیناًکڑوا ہوتا ہے، آج ہمارے معاشرے میں خواتین اپنے حقیقی رشتوں کے ہاتھوں ذیادہ ذلیل و خوار ہوتی ہیں۔ اگر بیٹی ہے تو باب کی عزت پر قربان ہو رہی ہے ، ماں ہے تو بیٹے کی محبت پر مر رہی ہے، بہن ہے تو بھائی کی عزت کے بوجھ تلے پس رہی ہے، اور بیوی شوہر کی ذیادتی کا شکار ہے۔ غرض وہ ساس ہے یا بہو نند ہے یا بھاوج ، دیورانی ہے یا جھٹانی جہاں جہاں مرد اس کے ساتھ ہے وہ اپنے جیسی دوسری عورت کا استحصال کر رہی ہے کیونکہ کمزور کی حکومت کمزور پر ہی ہوتی ہے۔ مرد پر وہ حاکم نہیں ہو سکتی اس لیے اپنی جیسی عورت کو محکوم بنا کر خوش ہوتی ہے ۔ ایک طرف تو ہم اپنے بزرگوں کا خیا ل رکھنے کا دعویٰ کرتے ہیں اور دوسری طرف پبلک ٹرانسپورٹ میں کھڑے ہوکر سفر کرنے والے بزرگوں پر نظر ڈالیں ، بینکوں کی قطار میں ، ٹیلی فون اور بجلی وغیرہ کے بل جمع کرنے کے قطار میں ، سودا سلف لانے اور لے جانے والے ، بوجھ اٹھانے والے، جسمانی طاقت سے ذیادہ مشکل کام کرنے والے ، ہسپتالوں میں کھڑے ہوئے بے بس و لاچار بزرگوں کو دیکھئے ! کیا ہم میں سے ذیادہ لوگ ایسے ہیں یا چند لوگ ایسے ہیں جو ان بزرگوں کی مدد کرکے خوشی محسوس کر تے ہیں؟
سوچنے اور کرنے کے لیے ہمارے پاس بے شمار باتیں ہیں اور بہت سے کام ہیں ۔ بس صاحب دل ہونا چاہیے ، ہمارے یہاں ان باتوں کو بیان کرنے کا مقصد صرف آپ کی ذہین پر دستک دینا ہے ، یہ سب طے شدہ باتیں ہیں لیکن مجموعی طور پر جو نظر آتا ہے اسے دیکھ کر اس پر غور کرکے اگر اپنی خامیوں کو دور کر لیا جائے تو مشرق یقیناًاپنی خوبیوں کے ساتھ مغرب سے ذیادہ بہتر معاشرہ بن سکتاہے۔ کیونکہ زندگی ٹیکنالوجی کے ساتھ نہیں بلکہ انسانوں کے ساتھ بسر کی جاتی ہے۔

]]> 0
Condolence meeting held Sat, 10 Oct 2015 17:11:15 +0000 Read more ↪ ]]> CHITRAL, Oct 10: A meeting was held at the local press club to condole the death of father of senior journalist Muhammad Sharif Shakeeb of Geo News Peshawar.
The meeting, presided over by Jahangir Jigar, the president of the press club, expressed shock over the death and prayed that Allah Almighty may rest the departed soul in eternal peace and give courage to the bereaved family to bear the loss.–Bashir Hussain Azad

]]> 0
Probe against former DC demanded Sat, 10 Oct 2015 13:45:35 +0000 Read more ↪ ]]> CHITRAL, Oct 10: President Insaf Student Federation (ISF) Chitral chapter Nazir Ahmed has demanded an inquiry into allegations of large-scale corruption by former Deputy Commissioner Aminul Haq.
Nazir Ahmed

Nazir Ahmed

In a statement issued here on Sunday, Nazir Ahmed thanked the chief minister and the KP government for transferring the DC from Chittal on the persistent demand of the PTI workers. But he said just transferring the DC was not enough and there was a need to launch an impartial investigation into allegations that Aminul Haq sold out employments in the Chitral Levies.
He said that during his over two-year stint in Chitral, the former DC made the district administration the den of a particular religious party besides committing large-scale corruption.
The ISF leader said Aminul Haq was involved in corruption in the appointment of Chitral Levies personnel and an investigation should be carried out against him so that justice can be provided to those deserving candidates who were denied their right to employment by selling the posts for millions of rupees.
He also alleged that the former DC utilized millions of rupees from the government kitty in support of the particular religious party in the recent local government elections against the interests of the PTI.–Bashir Hussain Azad

]]> 5
محکمہ وایلڈ لائف چترال کے زیر انتظام سیمینار کا انعقاد Sat, 10 Oct 2015 13:35:00 +0000 Read more ↪ ]]> چترال(بشیر حسین آزاد)محکمہ وایلڈ لائف چترال کے زیر اہتمام ایک سیمینار جی سی ایم ایچ چترال میں منعقد ہوا۔سیمینار میں ڈی ایف او وایلڈ لائف اور دوسرے اہلکار سمیت سکول کے پرنسپل،اساتذہ کرام،سکول نیچر کلب کے انچارج عبدالحفیظ،ایس ایس ٹی سکول ہذا اور دوسرے اساتذہ کرام کے علاوہ سکول نیچر کلب کے ممبر طلباء موجود تھے۔اکتوبرمیں دنیا بھر میں جنگلی حیات کے تحفظ کا دن منایاجاتا ہے اس سلسلے میں یہ اگاہی پروگرام منعقد کئے جارہے ہیں۔ڈی ایف او نے جنگلی حیات کے تحفظ کی اہمیت اور پاکستان میں موجود جنگلی حیات پر روشنی ڈالی۔عبدالحفیظ نے نیچر کلب کی سرگرمیوں پر روشنی ڈالی۔بچوں نے جنگلی حیات کے تحفظ کی اہمیت پر زور دیا ۔آخر میں بچوں میں انعامات تقسیم کئے گئے اور پُرتکلف ریفرشمنٹ دی گئی۔

]]> 0
کالاش اور مسلم دونوں کمیونٹیز کو امداد دلوانے کی کوشش کروں گا۔اقلیتی ایم این اے Sat, 10 Oct 2015 08:31:35 +0000 Read more ↪ ]]> چترال ( بشیر حسین آزاد)پاکستان مسلم لیگ ن کے اقلیتی رکن قومی اسمبلی اسفن یار بھنڈارا نے کہا ہے ۔ کہ حالیہ سیلاب نے کالاش ویلیز کا حلیہ بگاڑ کر رکھ دیا ہے ۔ متاثرہ خاندان بھر پور حکومتی امداد کے بے غیر دوبارہ بحال نہیں ہو سکتے ۔ اور میں بحیثیت ایم این اے ان ویلیز کے کالاش اور مسلم دونوں کمیونٹیز کو امداد دلوانے کی بھر پور کوشش کروں گا ۔ تاہم حکومت سے کوئی اچھے توقعات نہیں ہیں ۔ کیونکہ مرکزی و صوبائی حکومت کے درمیان تعلقات اچھے نہیں ہیں ۔ اور اپوزیشن بھی حکومت کو کام کرنے نہیں دیتی ۔ MNA Asfan Bhandar
ان خیالات کا اظہار انہوں نے چترال کے اپنے تین روزہ دورے کے موقع پر کالاش ویلی بمبوریت میں ایک بڑے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ اس موقع پر اُن کے سیکرٹری انیل اجمل اور کالاش قبیلے کے عمائدین سیف اللہ جان ، بہرام شاہ ،فیضی اور نومنتخب ویلج کونسل کے عہدہ داران موجود تھے ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ تمام مذاہب کے لوگوں کے خون کا رنگ لال ہے ۔اس لئے میں مذہب میں تفریق کا قائل نہیں ہوں ۔اور بلاامتیاز خدمت پر یقین رکھتا ہوں ۔ وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف نے ٹکٹ فراہم کرکے خدمت کا موقع دیا ۔اس لئے میں اُن کا شکر گزار ہوں ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ بہت کوشش سے جو فنڈ انہیں ملے ہیں ۔ وہ سب کے سب کالاش ویلیز میں خرچ کئے جائیں گے ۔ تاہم کالاش ویلیز میں جو تباہی آئی ہے ۔ وہ ایم این اے فنڈ سے بحال ہونا ممکن نہیں ۔ اس لئے میری حکومت اور اپوزیشن دونوں سے اپیل ہے۔ کہ اس علاقے کو بچانے اور متاثرہ لوگوں کی دوبارہ بحالی کیلئے وافر مقدار میں فنڈ کی فراہم میں بخل نہ کریں ۔
انہوں نے کہا ۔ کہ کالاش قوم اس دھرتی کا اثاثہ ہیں ۔ اور میری کوشش ہے ۔ کہ میں اسمبلی میں ایک بل پیش کرکے اس قبیلے کو ( ان ڈنجرڈ )معدومیت کے خطرے سے دوچار قرار دے کر اقوام متحدہ کے ادارے سے فنڈ حاصل کرکے ان کی بہتری کیلئے کام کروں ۔ لیکن یہ راستہ کافی مشکل ہے ۔ تاہم میں نا امیدنہیں ہوں ۔ اسفن یار بھنڈارا نے کالاش لوگوں کو یقین دلایا ۔ کہ وہ اپنے حصے کے ترقیاتی فنڈ کا سب سے زیادہ حصہ کالاش ویلز پر خرچ کریں گے ۔ انہوں نے کالاش ویلی بمبوریت میں گرلز ہائیر سکینڈری سکول کے قیام اور چترال شہر میں طالبات کیلئے ہاسٹل قائم کرنے کی یقین دھانی کی ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ وہ لولی پاپ کی سیاست سے نفرت کرتے ہیں ۔ اور جو کچھ اُن سے ہو سکا ۔ وہ کرکے گزریں گے ۔ انہوں نے یقین دلایا ۔ کہ وہ اپنے انجہانی والد ایم پی بھنڈارا کے نقش قدم پر چلتے ہوئے حکومت میں ہوں یا نہ ہوں کالاش قبیلے کی خدمت کریں گے ۔ اور چترال ے تعلق رکھنے والے کالاش اور مسلم برادری کیلئے اُن کے دروازے ہمیشہ کھلے رہیں گے ۔
اس موقع پر ایم این اے بھنڈارا کی طرف سے لائے گئے مشروبات ، سلائی مشینیں تقسیم کی گئیں ۔ جبکہ تمام کالاش خواتین کیلئے کپڑوں کی فراہمی کا اعلان کیا ۔ قبل ازین ایم این اے اسفن یار بھنڈارا جب ویلی پہنچے ۔ تو سینکڑوں مردو خواتین نے اُن کا شاندار استقبال کیا ۔ اُنہیں ہار اور روایتی لباس ( چپان ) پہنائے ۔ اور کلچرل شو پیش کرکے انہیں خوش آمدید کہا ۔ اس تقریب میں مقامی رہنماؤں ،انت بیگ ، فیضی ،مرینہ ،سیف اللہ ،بہرام شاہ ،شاہ حسین ، تاج ،اور ویلج چیرمین محمد رفیع نے خطاب کیا ۔ اور تینوں وادیوں کے مسائل سے اقلیتی رکن قومی اسمبلی کو آگاہ کیا ۔ انہوں نے اُن کے والد گرامی ایم پی بھنڈارا کی کالاش قبیلے اور وادی کے مسلمانوں کیلئے کئے گئے خدمات پر تفصیل سے روشنی ڈالی ۔ اور اُنہیں شاندار الفاط میں خراج عقیدت پیش کیا ۔ اور اسفن یار بھنڈارا سے بھی اپنے والد کے نقش قدم پر چل کر پسماندہ کالاش قبیلے کی خدمت کرنے کے توقع کا اظہار کیا ۔

]]> 0
متاثرین سیلاب میں پاکستان بیت المال کی طرف سے امدادی چیک تقسیم Fri, 09 Oct 2015 16:26:19 +0000 Read more ↪ ]]> چترال(بشیر حسین آزاد) پاکستان مسلم لیگ (ن) ضلع چترال کے صدر اور سابق ایم پی اے سید احمد خان نے کہا ہے کہ قدرتی آفات کی وقوع پذیری کو روکنا انسان کے بس کی بات نہیں ہے تاہم بہتر منصوبہ بندی اور پلاننگ کے ذریعے اس کے نقصانات کو کم کیا جاسکتا ہے اور وزیر اعظم نواز شریف نے عنان حکومت سنھبالنے کے بعد جہاں دوسرے شعبہ ہائے زندگی میں ترقی کا عمل نئی سرے سے شروع کیا ہے ، وہاں ڈیزاسٹر منیجمنٹ کے سلسلے میں بھی ان کی دلچسپی نمایان ہے اور اس سال چترال میں سیلاب کے فوراً بعدا ن کا دورہ چترال اس امر کا ثبوت ہےcheck
۔جمعہ کے روز گورنر کاٹج میں متاثرین سیلاب میں پاکستان بیت المال کی طرف سے امدادی چیک تقسیم کرنے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے وزیر اعظم کے مشیر انجینئر امیر مقام کی کوششوں کو سراہتے ہوئے کہاکہ ان کی کوششوں کی وجہ سے ہی چترال میں سیلاب میں جان بحق ہونے والوں کے لواحقین کی دلجوئی کے لئے پچاس ہزار کی خصوصی امداد پاکستان بیت المال کی طرف سے منظور کرائے گئے ہیں جبکہ دوسرے مسائل کے حل کے لئے بھی دن رات کوشا ن ہے۔
اس موقع پر امیر مقام کے سیکرٹری امین الحق اور پاکستان بیت المال کے ڈسٹرکٹ انچارج محمد یونس بھی موجود تھے۔ متاثرین کے لواحقین میں سید احمد خان اور امین الحق کے علاوہ پارٹی کے دیگر ممتاز رہنماؤں فضل رحیم ایڈوکیٹ، محمد کوثر ایڈوکیٹ اور محمد وزیر خان نے چیک تقسیم کئے۔

]]> 0
آئی جی جیل خانہ جات عزیز خٹک کا ڈسٹرکٹ جیل کا معائنہ Fri, 09 Oct 2015 16:15:23 +0000 Read more ↪ ]]> چترال (بشیر حسین آزاد)آئی جی جیل خانہ جات عزیز خٹک نے گزشتہ روز چترال کا دورہ کیا ۔سابق ڈپٹی کمشنر چترال امین الحق کے ہمراہ ڈسٹرکٹ جیل چترال کا معائنہ کرنے کے بعد قیدیوں سے ملے اور ان کے مسائل دریافت کئے ۔ آئی جی نے جیل کے اندر صفائی کی تعریف کرتے ہوئے کہاکہ چترال جیل صوبے کے تمام جیلوں سے انتہائی صاف ہے۔ اس موقع پر سپرنٹنڈنٹ چترال جیل احسان الدین نے آئی جی کو جیل سے متعلق بریفنگ دی ۔ آئی جی نے سپرنٹنڈنٹ سمیت تمام عملے کی کارکردگی کی تعریف کی ،۔ڈپٹی سپرنٹنڈنٹ ریاض احمد و دیگر بھی موجو د تھے۔

]]> 0
Chitrali youth wins national table tennis tournament Fri, 09 Oct 2015 16:04:51 +0000 Read more ↪ ]]> fahadPESHAWAR, Oct 9: Farhad Khawaja Chitrali won the Second Governor All Pakistan Open Table Tennis Championship.
In the final match of the tournament, Chitrali beat Ubaid Shah 4:2.
Right to Services Commissioner Azmat Hanif Aurakzai, who was the chief guest at the final of the tournament, gave away cash awards and trophies among the winner and runner-up of the championship. A large number of people were present on the occasion.–Nadir Khawaja

]]> 0
Four nazims elected to provincial finance commission Fri, 09 Oct 2015 13:42:11 +0000 Read more ↪ ]]> PESHAWAR, Oct 9: Four nazims were elected as members of the Provincial Finance Commission (PFC) at District Council Hall Peshawar on Friday.
Secretary Local Government Syed Jamaluddin Shah conducted the polls as Returning Officer while Senior Minister Inayat Ullah Khan supervised the process.
Azizullah Alizai of Dera Ismail Khan and Niaz Ahmad from Shangla were elected amongst the district nazims while Aslam Hayat Khan from Ghazi and Azazullah Khan from Sera Naurang got a majority votes amongt the tehsil nazims to represent local governments in the PFC.
Under the new formula, four nazims were directly elected by the present lot of 23 district and 68 tehsil, town nazims the PFC unlike the previous procedure of nominating two nazims by the provincial government.

]]> 0
Govt’s negligence forces volunteers to repair broken road Fri, 09 Oct 2015 12:31:44 +0000 Read more ↪ ]]> BOONI, Oct 9: Fed up with repeated demands and government departments’ apathy, local volunteers have started a patchwork on the main road in the Booni town.road copy
The road from the Booni bridge to the Aga Khan Medical Centre has developed ditches and potholes and commuters were facing troubles using it.
None of the government officials or elected representatives bothered to get the road repaired even though many of them daily commuted on it.
The local volunteers and members of the transport union working on the repair of the road told ChitralToday that they would soon complete the work and also repaire the Booni bridge which had also been in a poor shape for long.
It may be noted that work on the project to construct an RCC bridge in place of the old wooden bridge in Booni has been stopped due alleged misuse of funds. The volunteers said they would collect donations from the public to replace the old wooden plunks of the bridge to repair it soon.
Public circles appreciated the rising sense of volunteerism among the community but warned the government quarters not to deviate from their basic function of public service.road2 copy

]]> 1
Ex-MNA looted Fri, 09 Oct 2015 03:50:31 +0000 Read more ↪ ]]> CHITRAL, Oct 9: Former MNA Maulana Abdul Akbar Chitrali was robbed by a gang in Mardan on Thursday night.
Reports said the MNA was found lying unconscious along a roadside in Mardan. He was perhaps given some tranquilizer and then robbed of cash and valuables.
The former lawmaker belonging to Jamaat-e-Islami was going to Peshawar when the incident occurred. He was taken to a local hospital where he was admitted.–SN Peerzada

]]> 4
Osama Ahmad Waraich new DC Chitral Thu, 08 Oct 2015 18:10:10 +0000 Read more ↪ ]]> CHITRAL, Oct 8: The deputy commissioner of Chitral, Aminul Haq, was transferred on Thursday.
osamaHaq has been replaced with Osama Ahmad Waraich, who will take charge of the office soon. Mr Waraich, an officer of the Pakistan Administrative Service (PAS), is currently posted as the additional deputy commissioner of Peshawar.
Aminul Haq was made director Civil Defence Peshawar, a post which remained vacant for long. It may be noted that for long political and social circles of Chitral had been demanding the transfer of the DC. He had been accused of influencing the May 2015 local governmnet elections in Chitral in favour of the Jamaat-e-Islami. Besides, it was also alleged that the DC made appointments in the border police without following rules and in violation of merit.
In the controversy over the non-issuance of a visa to the British principal of Langlands School and College, Mr Haq also allegedly played a role in favour of a group of teachers who were sacked by the principal, Carey Schofield.

]]> 0
Four nazims to be picked for PFC tomorrow Thu, 08 Oct 2015 15:52:42 +0000 Read more ↪ ]]> PESHAWAR, Oct 8: The KP government has announced the schedule for election of nazims to represent local governments in the Provincial Finance Commission (PFC).
The election will be held on Friday at District Council Hall Peshawar wherein Secretary LG&RD Syed Jamaluddin Shah would be the Returning Officer while Senior Minister LG&RD Inayat Ullah Khan would supervise the election process.
Under the new formula, four Nazims will be directly elected for PFC by the present lot of 23 district and 68 Tehsil, Town Nazims as the previous procedure of nominating two nazims by the provincial government has been ceased while the LG representation has also been doubled. All the district and tehsil nazims have been summoned to Peshawar for the purpose except that of Kohistan and Bannu where cases are pending.
As per election programme, the nomination papers by the interested nazims could be filed from 10am to 11am on October 9 at District Council Hall Peshawar after which two representatives of District Nazims for PFC would be elected between 11am to 12noon.
Similarly, the nomination papers by the tehsil, town nazims could be filed on the same day and venue from 2pm to 3pm, where after their two reps would be elected between 3:30pm to 4:30pm.

]]> 0
Record-breaking irregularities Thu, 08 Oct 2015 14:17:40 +0000 Read more ↪ ]]> Halia village our neighbourhood councils ki secretaries ki bharti me ikhtiyarat ka jo najaiz istimal hua tarikh me uski misal nhi mlti.subai wazir bldiat zilla nazim chitral DC our AC sahb ne soche samje mansube ke teht insaf ki dhjian ula di.kpk me hokumat tabdeli our inqlab ke nam par qaum hai. Lekin insaf our inqlab ke theka daron ne insaf ka junaza nikal diya.
Kehne ko to kpk me tamam bhrtian mert par hoti hain.. lekin village sectries ki tayunati me nts test hone ke bwjd kuch balon ki marzi ke liay sawbdidi numbers par manpasan logon ko bharti kia gya..khan sb awam poch rehe hain insaf kahan gya.
Awam ye bi puchti ha siraj ul haq sb se kya yehi islami inqlab ki misal hai.islami inqlab se pehle jamhri inqlab to lake dekhao. Ek siraj ulhaq our imran khan se nizam nhi bdlta jbke ma takht tamam amla bad dianat our corrupt hai.log sawl kar rehe hain awaz do insaf ko insaf kahan hai.
Hum imran khan sb our siraj ul haq sb se mutalba karte hain jald az jald gaplon ki tahqiqat karake sirf nts par bhartion ki safarish ki jaye.ta ke haqdar ko iska haq mile.

Naveed Ahmad.

]]> 1
Youth commits suicide Thu, 08 Oct 2015 05:57:44 +0000 Read more ↪ ]]> CHITRAL, Oct 8: A youth committed suicide in the Laspur valley on Wednesday evening.
Residents of the area said Jamal Uddin Shah, son of schoolteacher Qamar Uddin Shah, a resident of Sero Tek in Harchin, killed himself due to unknown reasons. The deceased had recently completed education by obtaining a master degree.

]]> 0
سپاہی کا خواب Thu, 08 Oct 2015 04:17:40 +0000 Read more ↪ ]]> javedدھڑکنوں کی زبان
محمد جاوید حیات
رات 2 بجے تک نعیم ، کریم ،حکیم اور شمیم ڈیوٹی کر یں گے پھر دوسرے ساتھی ،، سب نے باآواز بلند کہا ۔۔یس سر! نعیم نے اپنی نبدوق کے قبضے میں رکھے ہاتھ کو اور بینج لیا اور ایک اور یس سر کہا ۔۔ شام کا کھانا آگیا سب نے کھالیا اور بندوق اُٹھا کے اگلے مورچوں کی طرف چلے ۔آسمان پر بادل تیر رہے تھے ۔۔۔۔بڑی عید آنے میں صرف ایک رات باقی تھی۔ ان سب سپاہیوں کے گھروں میں ہل چل تھی عید کی تیاریاں تھیں۔ بچے مسرور تھے۔ نعیم کا ’’چاند‘‘جو صرف 3 سال کا تھا ۔۔۔توتلی زبان تھی۔ گلاب چہر ہ تھا۔ نازک کلائیاں تھیں ۔چھیریرابدن تھا ۔وہ جو کپڑا پہنتا نعیم کی آنکھوں میں سجتے ۔پاک سرزمین کی دور ویران سرحد تھی۔ دشمن کی در اندزی کا خطرہ تھا۔ جگہ ویران تھی۔ ہر نیٹ ورک سے دور تھی ۔نعیم مورچے میں گھسا ۔ ٹھنڈی ہوا کا جھونکا اس کے چہرے سے ٹکرایا۔ نعیم چہرہ دشمن کی سرحدکی طر ف کر کے بیٹھ گیا ۔اس کی بندوق کے قبضے پر اس کا ہاتھ تھا۔ ہر مورچے میں دو دو جوان تھے۔نعیم اوشمیم ایک مورچے میں تھے۔
ا ن کے درمیاں پہلے آرام کرنے پر جھگڑ ا ہوا۔ دونوں پہلے آرام کر نے پر راضی نہ تھے۔ہر ایک کی خواہش تھی کہ ساتھی پہلے آرام کرے۔ چاند آسمان پر ہنس رہا تھا۔ شمیم نے دونوں مٹھیاں نعیم کی طرف کر دی ۔۔ ٹاس کرتے ہیں ۔۔۔دایاں مٹھی لیتے ہوکہ بائیاں ۔۔ ایک کنکری دبی ہے ۔نعیم نے دایاں لے لی اور ٹاس جیت لیا۔شمیم کو اب آرام کرنا تھا۔ دشمن سامنے تھا ۔نعیم نے ا پنی بندوق کو بوسہ دیا ’’ تم میری زندگی ہو ‘‘ شمیم کی آنکھ لگی تونعیم بہت ماضی میں چلا گیا ۔خوابوں کا جزیر ہ تھا ۔یادوں کی کتاب تھی ۔۔ سلیمان کے گھر نعیم پیدا ہوا ۔غربت تھی۔ گھر میں چراغ جلاکہ نہ نہ جلانعیم کو یادنہیں ۔۔۔سکول جانے سے پہلے وہ ساتھی بچوں کے ساتھ کھیلا کرتے ۔برف پڑی ہوتی۔ بچے دو گروپو ں میں تقسیم ہوتے ۔برف کے گولوں سے جنگ لڑا کرتے ۔۔ ہر روز بھارت ہار جاتا پاکستان جیت جاتا ۔۔اسی طرح مختلف مقابلے ہوتے۔۔ سکول گئے تو استاد کلاس روم میں کہا کرتا۔۔ بچو! اگر اسلام ،دین ،ملک و قوم اور عز ت وآبرو کے لئے جان دینی ہوتو دے دوْ۔۔
ہمارے سپاہی سرحدوں پر جاگ رہے ہیں اس لئے ہم یہاں پر آرام سے سوتے ہیں ۔وہ ہمارے محافظ ہیں ۔وہ ہماری خوشحالی اور آرام کے لئے اپنا آرام قربان کرتے ہیں۔اس وقت انہیں احساس نہ ہوتا۔ کہ جان دینا کیا چیز ہے ’’جان دیا‘‘ کس طرح جاتاہے ۔سکول کے کمرے میں استاد کی باتیں سن کر یوں لگتا کہ وہ دشمن سے گھتم گھتا ہورہے ہیں جان دے رہے ہیں۔۔ میٹرک پاس کیا تو باپ کی آنکھوں میں ائر ی افسردگی نے اس کو فکر معاش کی طرف کھینچ لایا۔ فوج میں بھرتی ؂ہوا ۔ برسر روزگار ہوا تو شادی بھی ہو گئی۔ وسیم جیسا چاند بھی آگیا ۔بوڑھے ماں باپ ہے اور وہ ان سے دور اس ویرانے میں مورچے میں پڑا جاگ رہا ہے۔۔عید کی رات ہے ۔۔۔ اس کو غصہ آیا ۔۔ کہا ۔ یہ کیسی زندگی ہے۔غمی خوشی میں سب سے دور، اپنوں سے دور ،اپنے چاند سے دور ،اپنی زندگی ’’ سمیرا ‘‘ سے دور ،اپنی ماں کی گودی کی خوشبو سے دور ،ابو کونئے کپڑے پہنے کے بعد دیکھنے سے محروم ،وسیم کو نئے کپڑوں میں دیکھ کر اس کی آنکھوں پہ بوسے دینے سے دور ،، ہر خوشی سے محروم ۔۔ ہر آرزو کا قتل ۔۔ یہ کیسی زندگی ہے۔ لوگ آرام سے سورہے ہیں ۔نیند کے مزے اڑا رہے ہیں ۔۔۔۔امن کی چادر پاک وطن کی فضاؤں کو ڈھانپی ہے ۔ میں سرحد میں۔۔۔ مورچے میں۔۔۔ ۔
اس مورچے میں امن کہاں ہے ۔۔۔خوف ہے ۔دشمن کی گولی آگے سے سرسراتی ہوئی آئے گی توسینے سے پار ہوجائے گی ۔مرجاؤں گا ۔وسیم یتیم ہوجائے گا سمیرا کا سہاگ لٹے گا ۔آہ ۔۔ وہ میری زندگی ہے۔۔ میری آرزو ہے۔ مجھے مجھ سے کہیں گی کہ کیوں مجھے اکیلی چھوڑ گئے ۔اف: وہ میری قبر پہ آئے گی تو اس کا چاند سا چہر ہ بجھا بجھا سا ہوگا۔ریشمی ذلفیں گرد الود ہونگی بلوریں آنکھوں میں محبت کی چمک کی جگہ آنسو ہونگے ۔شادابی گا ل ویران ہونگے ۔۔ اف میری ماں آہ کرے گی ۔میرے ابو دل پہ ہاتھ رکھے گا ۔۔ وہ بندوق مورچے کی دیوار سے ٹکا دیتا ہے ۔ یہ کیسی زندگی۔۔ رات 12 بجے ہیں شمیم جاگتا ہے ۔تو نعیم نیند کی آغوش میں چلا جاتاہے۔خوا ب کے جزیروں میں چلا تا ہے ۔۔دیکھتا ہے ۔ کہ پاک سرزمین کے ہر گھر میں شادمانی ہے۔ بچوں کی آنکھوں میں مسرت ہے ۔بچیاں عید کی تیاریوں میں ہیں ۔بوڑھے اللہ کا شکر ادا کررہے ہیں۔ ہر گھرمیں قربانی کے جانور؂موجودہیں ۔اس کا وسیم اچھل کودرہا ہے۔اس کی سمیرا ہنس رہی ہے۔۔ منظر بدلتا ہے ۔
ایک وسیع وعریض میدان ہے ۔آسمان پر کالے بادل ہیں۔ہتھیار ہیں ۔گولہ بارود ہے پوری فوجی دانت پیس رہی ہے۔ ایک کالا کلوٹا جنرل کھڑا ہے ۔خطاب کرہاہے۔۔۔ ۔ اس پاکستان کو صحفہ ہستی سے مٹادو۔۔ اٹھوہر گھر میںآگ لگادو۔۔ بچوں کو کچل دو۔ عورتوں کو آگ میں ڈال دو ۔بڑوں کوتہیہ تیغ کردو۔ اس سرزمین کو روند ڈالو ۔ پورا ہندوستان یہی چاہتا ہے۔ اس کے منحوس الفاط منظر بن کر سپاہی کی آنکھوں کے سامنے اجاتے ہیں۔۔گولہ بارود کی بدبو ہے۔اس کے شہر جل رہے ہیں۔اس کا وسیم کچلدیا گیا ہے ۔اس کی سمیرا کو پکڑکر آگ میں پھینکا جارہا ہے۔گھروں پہ آگ برس رہی ہے ۔وہ لرز کر جاگ اُٹھتا ہے ۔۔۔دیکھتا ہے کہ خواب ہے ۔۔ وہچیخ کر کہتا ہے۔ وسیم ہنسو بیٹا ۔مسکراؤ ۔آرام سے سو جاؤ ۔تیراا ابو دشمن کی سرحد پہ جاگ رہا ہے۔ بیٹا سب کو بتاؤ کہ خوشیاں منائیں ۔تیر ے ابو کا مضبوط ہاتھ اپنی بندوق کی لبلبی پر ہے وہ دشمن کے آنکھوں میں آنکھیں ڈالے جاگ رہا ہے ۔اپنی دادی کو بتاؤ کہ آرام سے جائے نماز پہ سجدے میں گرجائے اور اس پاک سرزمین کی سلامتی کے لئیے گڑگڑائے۔ ۔سمیرا جاگ جاؤ ۔ گھر کی صفائی کرو۔ نماز پڑھو ۔میرے وسیم کو جگاؤ اس کی آنکھوں پر بوسہ دو ۔اس کو کپڑے پہناؤ ۔میری زندگی خود بھی کپڑے پہن لو۔ملکہ بنو ۔مجھے تمہاری پاکیزہ خوبصورتی کی قسم میں دشمن کی آنکھوں میںآنکھیں ڈالے کھڑا ہوں ۔مجھے یاد کرکے افسردہ نہ ہوجاؤ ۔فخر کرو۔ کہ میں خاک وطن کی حفاظت کا فریضہ انجام دے رہا ہوں ۔سب کوبتاؤ کہ وہ جی بھر کے ہنسیں ۔آرام سے زندگی کی رنگنیوں میں کھو جائیں پتہ ہے کہ اگر میں یہاں پر نہ جاگوں تو وہاں پر عید نہیں ہوگی ۔دشمن کو ہماری خوشیاں پسند نہیں۔مگر دشمن کو پتہ ہے کہ میں جاگ رہا ہوں ۔اس لئے وہ خاموش بیٹھا ہے۔۔۔ سمیرا میں کبھی نہیں سو ؤں گا۔
میرا جاگنا میری عید ہے ۔اس ویران سرحد میں شیر کی طرح جاگتے رہنے میں جو مزہ ہے ۔وہ وہاں بنگلوں کے اندر کہاں ہے ۔میں زندہ قوم کا زندہ فرد ہوں اس پاک سر زمین کی حفاظت کی قسم کھائی ہے ۔میری اس قسم کے صدقے افسردہ نہ ہو ۔۔۔۔۔عید کی صبح پھوٹتی ہے دونوں نوجوان مورچے میں عید ملتے ہیں۔

]]> 0