A feather in JUI’s cap

CHITRAL, April 25: Though almost all political parties never tire of claiming to work for the emancipation of women, the Jamiat Ulema-e-Islam (JUI) Chitral got ahead of all of them by practically proving it.
kalashAs the rigmarole for the forthcoming local government elections continues along with leg-pulling and bargaining among politicians, the religious political party, JUI, surprisingly allotted a ticket to a women belonging to the pagan Kalash tribe.
ChitralToday has learnt that the JUI has putted the name of Kalash lady Hazrat Gul in the second priority for the reserved seat of women in the District Council. The development could not be termed any minor step because political parties have only fielded Kalash minorities for the reserved seats of minorities but only JUI-F has allotted ticket to Kalash lady in Women seat thus making it a very remarkable political step not only in Chital rather across the province.
Commenting on this decision, the JUI Chitral General Secretary Maulana Abdul Shakur said that a delegation of Kalash tribe approached the local JUI leadership and requested them for granting of minorities seat in Tehsil Council, keeping in view the backwardness of Kalash areas and less opportunities to this minority group  JUI not only fielded Kalash candidate in Tehsil counicl Chitral rather we also gave seat to Kalash tribe on the Women reserve seats which will make their presence strong in district council.
He said that JUI is hopeful securing at least 3 women reserve seats in district council and the Kalash lady would be the one. He added that in district council the minorities reserve seat were only Two and almost all the political parties have nominated their male candidates, maximum party seats were required for the selection of party candidates on minorities seats but the selection of women candidate would be a bit easy task as there were 8 women reserve seats.
It is remarkable decision of JUI will shows its political maturity, harmonized political culture and communal acceptance in Chitral. The rightist polticial-religous parties are always considered too much rigid and hardcore but the step of JUI speaks totally against and it shows the peaceful coexistence and tolerance for different ethnic and religious groups.


Print Friendly

گوادر اور کاشغر راہداری روٹ

عنایت اللہ اسیر

ہم گوادر اور کاشغر راہداری روٹ کے منصوبے کا کھلے دل سے خیر مقدم اور پنجگور سے گذار کر گوادرپہنچائی جائے توگوادر سے ھنگو تک کا راستہ برادر ملک چین کے ساتھ ساتھ سنٹرل ایشیاء کے ممالک کے لیے بھی گوادرتک رسائی کا مشترکہ بین الاقوامی شاہراہ کے طور پر استعمال ہوگا۔

aseerخیبر پختونخواہ کے تمام دہشت گرد زدہ علاقہ اس راستے کا گزر گاہ ہو کر لوگوں کو روزگار فراہم کریگا ۔ علم و صحت اور آنے جانے کے سہولیات سے مستفید ہو کر بہت کم مدت میں یہ قبائلی باشندے پیارے ملک کے تعمیر و ترقی میں اپنا حصہ نبھائیں گے۔ بلوچستان کے پسماندہ اوردور افتادہ علاقوں تک رسد آسان اور پاک وطن کے ہر شہر سے ان علاقوں تک تجارتی سامان اور دیگر سہولیات کم ترین وقت میں مل سکیں گے۔اس عالمی شاہراہ پر رات دن کی ٹریفک سے ایک رونق ہوگی ۔ بجلی گیس کو بھی اسی شاہراہ سے ان پسماندہ علاقوں میں انڈسٹریل اسٹیٹ بنا کر روزگار کے ذرائع سے مستفید ہونگے۔ خیبر پختونخواہ سے بلوچستان تک کے تمام علاقوں میں مختلف معدنیات تک میں رسائی آسان ہو جائیگی۔ ھنگو سے ڈیرہ اسماعیل خان جنوبی و شمالی وزیرستان سے ہوتے ہوئے بلوچستان کے بہت وسیع علاقے کو مستفید کرتے ہوئے یہ شاہراہ ہر لحاظ سے ایک ریڑھ کی ہڈی کی طرح محفوظ، مضبوط اور پورے پاکستان کے لیے ہر لحاظ سے قوت کا سبب ہوگا۔ اس عظیم شاہراہ کو اس کے جغرافیائی مختصر ترین فاصلے سے گذارنے سے موجودہ تمام شاہراہیں متاثر نہیں ہونگی اور جو ٹریفک موٹر وے سے راولپنڈی لاہور جانا چاہے تو ان پر کوئی پابندی نہیں ہوگی۔لہٰذا صوبہ پنجاب سے ہر صورت میں اس شاہراہ کی تعمیر سے ہر لحاظ میں مستفید رہے گی۔لہٰذا قومی سوچ کے مطابق حسن ابدال سے اس عظیم شاہراہ کو ھنگو ، کرک، ڈیرہ اسماعیل خان کے مقام پر ایک بین الاقوامی جنکشن پر ملایا جائے تاکہ برادر ملک چین اور ایران افغانستان جس کی لازوال دوستی پر ہر پاکستانی کو فخر ہے کے ساتھ ساتھ سنٹرل ایشیاء کے نو آزاد اسلامی ممالک کی اشتراک کو بھی یقینی بنا کر اس شاہراہ کو مثالی سہولیکات اور دونوں طرف سے ریلوے ٹریک کی سہولت کے ساتھ ساتھ مختصر ترین فاصلے پر بنایا جائے جو صدیوں تک اس حکومت کی یادگار ہوگی۔


Print Friendly

DPO asks police officials to continue fight against drug menace

چترال(بشیر حسین آزاد)گذشتہ دن ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر پولیس کانفرنس روم میں ضلع چترال کے ایس ڈی پی اوز کی میٹنگ منعقد ہوئی۔جسکی سربراہی ڈسٹرکٹ پولیس افیسر چترال عباس مجید مروت نے کی

Policeمیٹنگ میں ڈی ایس پی ہیڈکوارٹر چترال،ایس ڈی پی او مستوج،ایس ڈی پی او دروش کے علاوہ ضلع چترال کے ڈی آر سی کے سیکرٹری اور شعبہ جات کے انچارج صاحبان نے شرکت کیں۔میٹنگ میں ضلع چترال میں امن ومان کی صورت حال کے علاوہ جنرل کرائم زیر بحث آئی ،شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے ڈی پی او چترال نے عوام کو سستا انصاف فراہم کرنے کے لئے ڈی آر سی ،اورپی اے ایل کی کارکردگی کو مزید بہتر بنانے پر زور دیا۔ڈی پی او چترال نے ڈی آر سی اور پی اے ایل کے دفترات کے معیار کو بہتر بنانے کے لئے ایس ڈی پی اوز کو خصوصی ہدایات کی۔اور اس سلسلے میں مناسب اقدامات اُٹھانے کا فیصلہ ہوا۔ڈی پی او چترال نے شرکاء پر زور دیا کہ وہ ضلع چترال سے منشایات کے لعنت کے خاتمے کے لئے موثر کردار ادا کریں۔ڈی پی او چترال نے اس بات پر زور دیا کہ ہر ایک افسیر کی کارکردگی کا روزانہ کی بنیاد پر جائزہ لیا جائے گا۔اور خاص کر منشیات کے خلاف کاروائی میں کسی کی بھی کوتاہی برداشت نہیں کی جائیگی۔

میٹنگ میں حالیہ بلدیاتی انتخابات کے انعقاد کو پُرامن بنانے کے بارے میں مختلف امور کا جائزہ لیا گیا۔اور یہ بھی فیصلہ ہوا کہ بلدیاتی انتخابات کے انعقاد تک ٹرانسفر\پوسٹنگ نہیں کی جائیگی۔ڈی پی او چترال نے اس بات پر زور دیا کہ لواری ٹاپ کھلنے کے بعد سیاحوں کی آمد شروع ہے لہذا ضلع چترال کے ماحول اور سیاحوں کو پُرامن ماحول فراہم کرنے کے لئے گشت ،ناکہ بندیوں اور سیکورٹی اقدامات کو سخت سے سخت کیا جائے۔تاکہ کوئی ناخوشگوار واقعہ پیش نہ آجائے۔

 


Print Friendly

Election fever grips Garam Chashma

By Muhammad Amin Baloch
With the announcement by the provincial government to hold the local government elections by the end of May, political thermometer has also ascended in Chitral.
Different political parties, including PPP, PTI, JI, JUP and AML, are racing to hold corner meeting and building coalition to occupy prestigious district slot.
chitralThe elections are essential for creating political awareness among the people. As the representatives are elected from the grass root level, therefore such elections prove training ground for political grooming. These public representatives also understand basic problems of the people well and will make correct policy and planning accordingly to solve them at the grass roots level.
According to the LB plan envisaged by the PTI government, a major bulk of development works will be done by the local elected representatives, therefore occupying this office will become a natural contest among the major political players in the district. In Chitral a unique kind of political coalitions have been formed in complete contrast of set up in the Senate and KPK.
In the Senate, a coalition is existed between PPP and JUI and in KPK PTI and JI have a strong coalition government.However,for contesting local body elections in Chitral JUI and JI have entered into coalition, making seats adjustments in sixteen UCs and also a seat adjustment understanding has been reached on need basis between PPP,PTI and APML.As it is apparent that such kinds of coalitions are a direct competition between the liberal and conservative political parties to form district government in Chitral and also a signal for future political strategy in the district.
It is premature to predict of which party or rather coalition will win majority of seats in the village, tehsil and the district councils, despite of claims and counter claims by different political parties’ adherents? Politics in Pakistan revolves around biraderi and affinity. Therefore, it is natural, the lowest pillar of the LB elections will be contested on the basis of social relationships. Candidates who have strong biradari support and intra-social relationships will have the chances of winning the elections. However, various political leaders will also accumulate supports for their candidates.
For the two cadres political support will play an important role as these are contested on political basis. Whatever should be the results of the forthcoming elections these elections will prove essential in electing right candidates who will serve the people with dedication and honesty.
These days the whole of Garam Chashma especially and the rest of tehsil Lotkoh in generally is busy in elections campaign and coalition making and breaking. A number of new young and seasoned candidates for District and tehsil slots have appeared on the political arena for contesting elections and becoming public representatives. These candidates include Pakistan People’s Party, All Pakistan Muslim League, PTI and independent candidates, some of them are supported by prominent personality of Garam Chashma.
Though PPP is the major political party of the area. It is also called Larkana 2 because of the deep devotion of the people of Garam Chashma to the Bhutto family. It is also the home town of the current MPA Salim Khan who also happens to be president of PPP district Chitral.So winning of PPP becomes natural. But PPP will face tough competition from their opponents as presently PPP does not appear to have done proper home work in this connection, although it has strong candidates. Whether party tickets have been awarded to candidates possessing of reputation and integrity in the three UCs of Lotkoh will be judged after elections results. General (r) Musharraf political card is also being used by supporters of APML to attract the people of Chitral. During the last two and half years, APML has performed poorly despite winning the only seat from Chitral. Miraculously,someone will fly to Chitral as Musharraf’s envoy to seek votes for the APML candidates.


Print Friendly

Is it justified?

During the 2013 elections, Abdul Latif was the candidate of the Pakistan Tehreek-e-Insaaf for the National Assembly seat of NA 32 Chitral and Rehmat Ghazi and Haji Sultan were the candidates for the two Provincial Assembly seats.
As we all know they lost the elections and now comes the Local Government Elections. This time, the local district representatives or we can say the cabinet was given the authority to choose the candidates for the local government elections.
I am a supporter of the PTI. Now here comes a questions. Don’t we have other able candidates from Chitral main seats for local other than these and there is no other representative of the party for these elections?
If one has remained party candidate for MNA and MPA how can he think of contesting these local government elections. Is it Insaaf? How would people react to this. Is it all for a position or seat? And also if someone joins the party just a day before is awarded party ticket? What will the old and senior party workers think and react ? Do these kind of decisions effect the party ? With these kind of decisions what will be the difference between PTI and other parties?? These are just a few questions.

Wajahat Shah


Print Friendly

یونائیٹڈ ورلڈ کالجز اور آغا خان سیکنڈری سکول کوراغ

By Atta Hussain Athar

علم میں اضافہ، معاشرے میں ہم آہنگی،زندگی میں بہتری کی تمنا اور اپنی شخصیت میں نکھار پیدا کرنے سے انسان ترقی کرتا ہے۔اسی لیے کہا جاتا ہے کہ جتنی کوئی قوم تعلیم یافتہ ہوگی اتنی ہی جلد ترقی کی منزلیں طے کرے گی۔جب ترقی یافتہ قوموں کو ہم دیکھتے ہیں تو ان کی ترقی کا راز بھی ان کامیعارتعلیم اورمیعاری تعلیمی اداروں کا جال ہے۔اگست۲۰۰۷ میں چترال میں آغا خان ہایئر سیکنڈری اسکولز کے قیام کا مقصدبھی یہی ترقی کی طرف سفر تھااور بہت ہی کم عرصے میں ان دو اسکولو ں نے اس علاقے کے لیے بہت زیادہ Contributeکیا۔

WP_20150418_10_20_19_Proاگران کامیابیوں پر سرسری نگاہ ڈالی جائے تو صرف آغا خان ہائیر سیکنڈری سکول کوراغ کی نو طالبات نے ایم بی بی ایس میں داخلہ لیا جن میں سے تین آغا خان یونیورسٹی ،دو خیبر میڈیکل کالج،تین ایوب میڈیکل کالج اور ایک چائنہ میں زیر تعلیم ہے۔انجینئرنگ کی فیلڈ میں ابھی تک چار طالبات نے داخلہ لیاہے۔آغا خان یونیورسٹی بیچلرز آف نرسنگ کے پروگرام میں ۲۵طالبات ابھی تک داخلہ لینے میں کامیاب ہوچکی ہیں۔ایک طالبہ ایشین یونیورسٹی برائے خواتین چٹاگانگ بنگلہ دیش میں زیر تعلیم ہے اور اس سال ایشین یونیورسٹی کا ٹیسٹ گیارہ طالبات نے کوالیفائی کئے ہیں۔اس کے علاوہ ابھی تک سات طالبات امریکن یوتھ ایکسچنچ اینڈ کلچرل پروگرام میں کامیابی سے شمولیت کے ساتھ ساتھ۸ طالبات مختلف تعلیمی سرگرمیوں کے سلسلے میں امریکہ میں مقیم ہیں جن کی تعلیمی سرگرمیاں پانچ ماہ سے ایک سال کے دورانئے پر محیط ہے اور اس کے علاوہ باقی طالبات پاکستان کے بہترین یونیورسٹیوں میں زیر تعلیم ہیں۔ان تمام کامیابیوں میں سب سے بڑی کامیابی جن کو تصور کیا جاتا ہے وہ ہے طالبات کا یونائیٹڈ ورلڈ کالجز جیسے انٹرنیشنل مقابلے میں کامیابی ہے ۔اس سال یو ڈبلیو سی میں پاکستان کے کل ۲۰ کامیاب طلبہ میں سے دو طالبات ہما جاوید اور عارفہ نیاب کا تعلق آغا خان ہائیر سیکنڈری اسکول کوراغ سے ہے۔ کل پاکستان مقابلوں میں کامیابی حاصل کرنے کے بعدہما جاوید کا انتخاب Costa Rica ساؤتھ امریکن کیمپس اور عارفہ نیاب کا انتخاب اٹلی کیمپس کے لیے ہوا ہے۔جہاں یہ طالبات مکمل اسکالرشپ (یعنی ٹیوشن،ہوسٹل،تعلیمی اور سفر کے اخراجات اور دیگر وظیفے )میں دو سا ل میں آئی بی ڈپلومہ حاصل کریں گی ۔یہ ڈپلومہ پاکستان میں انٹرمیڈیٹ کے برابر ہوگا۔
انٹر نیشنل بیکلریٹ ڈپلومہ پروگرام تعلیمی حوالے سے محنت طلب اور متوازن تعلیمی پروگرام ہے جو طلبہ کو پوسٹ سیکنڈری تعلیم اور اس کے بعد کی زندگی میں کامیابی کے لیے تیار کرتا ہے۔اس پروگرام کا اعلیٰ میعار اس کی گریجویٹس کی کامیابی سے ظاہر ہے اوردنیا بھر میں بہت سے جامعات میں تسلیم شدہ ہے۔انٹرنیشنل بیکلریٹ(IB)کا مقصد ایسے تخلیقی سوچ رکھنے والے باعلم،باشعور اور دوسروں کا خیال رکھنے والے افرادکی صلاحیتوں کو نکھارنا ہے جو بین الثقافتی علم اور احترام کے ذریعے ایک بہتر اور پرامن دنیا بنانے میں مدد دیتے ہیں۔اس مقصد کے لیے یہ ادارہ اسکولوں ،حکومتوں اور بین الاقوامی اداروں کے ساتھ کام کرتا ہے تاکہ بین الاقوامی تعلیم اور پر جوش جائزے کے پرگرامات کو ترقی ملے۔
WP_20150418_10_20_39_Proاس پروگرام کے لیے وہ اسٹوڈنٹ اہل ہیں جن کی تعلیمی قابلیت میٹرکA+ اولیول یامساوی ہے یا جنہوں نےA+ نمبروں کے ساتھ انٹر میڈیٹ فرسٹ ایئر پاس کیا ہو۔ اس پروگرام میں مکمل اسکالر شپ میں ٹیوشن ،رہائش اور تعلیم و سفر کے اخراجات اور طلبہ کے لیے روزینہ شامل ہیں۔یہ اسکالرشپ یو ڈبلیو سی اور آمان فاونڈیشن کی مشترکہ پیشکش ہے اور اس کا مقصد ہر سال انٹرنیشنل بیکلریٹ ڈپلومہ کے حصول کے لیے یو ڈبلیو سی اسکول اور کالجز میں داخلے کے لیے ۲۰ پاکستانی طلبہ کو فنڈنگ کرنا ہے ۔پاکستان میں دسویں یا گیارھویں جماعت کے تعلیمی میعار ،اسکالر شپ کے میعاراور یو ڈبلیو سی میں کامیابی کے لیے ایک طالب علم کی مطلوبہ خصوصیات کو سامنے رکھتے ہوئے قومی سطح پرخالصتاً میرٹ کی بنیادپر طلبہ کا انتخاب کیا جاتا ہے ۔انتخاب کا عمل مختلف عناصر بشمول تحریری مضمون، درخواستوں،گروپ ورک اور انٹرویو زپر مشتمل ہوتا ہے۔
یو ڈبلیو سی (یونائیٹڈ ورلڈ کالجز) پوری دنیا میں ۱۴ کالجوں کا ایک مجموعہ ہے۔جہاں ۱۶ سے ۲۰ سال کی عمر کے نوجوان دو سال کے لیے یکجا ہو جاتے ہیں تاکہ وہ انٹر نیشنل بیکلریٹ ڈپلومہ کے حصول کے لیے پڑھیں ،خدمت خلق میں مصروف رہیں اور اس حوالے سے گفتگو کریں کہ دنیا کو کس طرح ایک بہتر رہنے کی جگہ بنایا جاسکے۔
اس تعلیمی تحریک کی بنیاد ۱۹۶۲ ؁ء میں مشہور ماہر تعلیم کرٹ ہان نے رکھی،جب اس نے ساؤتھ ویلز میں اٹلانٹک کالج کا افتتاح کیا۔اس تحریک کا مقصد ان نوجوانوں کو ایک پلیٹ فارم میں لانا تھا جو سرد جنگ کی شکست خوردہ اور منقسم دنیا میں پلے بڑھے تھے۔تاکہ امن ،اتحاداور بین الاقوامی تعاون کے مقاصد حاصل ہوں۔بلاشبہ علم میں اضافہ، معاشرے میں ہم آہنگی،زندگی میں بہتری کی تمنا سے انسان ترقی کرتا ہے ۔ دنیا میں اگر ترقی کرنی ہے تو تعلیم کے حوالے سے ہمیں ترقی یافتہ قوموں کے نقشِ قدم پہ چلنا ہوگا۔بصورت دیگرکوئی دوسرا اپشن ترقی کے لیے ہمارے پاس نہیں ہے۔


Print Friendly

Chitralis say Carey Schofield put Langlands College back on track

چترال (بشیر حسین آزاد) چترال کے سیاسی ،سماجی حلقوں اور طلباء کے والدین نے کہا ہے کہ لینگ لینڈ سکول اینڈ کالج کی بنیاد شہزادہ برہان الدین کی کوششوں سے رکھا گیا تھا جس کا مقصدیہ تھا کہ چترالی بچے بین الاقوامی زبان انگریزی پر عبور حاصل کرسکیں۔اسی وجہ سے ابتدامیں انگریزی ٹیچرز رکھے گئے۔

Carey_Schofield.jpeg

Carey Schofield (Google file photo)

اور سکول کے ابتدائی ایام کے طالب علم انتہائی کامیاب ہوئے۔جسکی مثال موجود ہ ڈی۔پی ۔او چترال بھی ہے۔لیکن بدقسمتی سے9\11کے بعد حالات کی نزاکت کو دیکھتے ہوئے انگریز اساتذہ چترال سے چلے گئے۔اور مسٹر لینگ لینڈ نے ضعیف العمری کے باوجودسکول کو سنبھالا رکھا جب اسکی صحت جواب دینے لگی تو سکول کی حالت اَبتر ہوگئی اور مقامی افراد کے ہاتھوں سکول کا انتظام بھی درست طورپر آگے نہیں چل سکا ۔لیکن چند سال قبل مِس کیری نے سکول میں آکر سکول کو پھر سے بہتری کی جانب گامزن کیا اورغفلت برتنے والے ملازمین اور اساتذہ کو فارغ کرکے اعلیٰ تعلیم یافتہ اور باصلاحیت اساتذہ کی تعیناتی کی گئی اور مذید مِس کیری کی کوششوں سے سکول میں اب دو غیر ملکی اساتذہ بھی پڑھائی کے فرائض انجام دے رہے ہیں۔اور سکول کی بہتری کی طرف گامزن ہے۔لیکن چند مفاد پرست عناصر سکولی کی بہتری ہضم نہیں کررہے ہیں اور سکول کے پرنسپل مِس کیری کے خلاف سازش میں ملوث ہے ۔

اُنہوں نے کہا کہ ہمارے انتظامیہ اور حکومت وقت سے پروزاپیل ہے کہ حکومت ہمارے بچوں کے مستقبل کو مدنظر رکھتے ہوئے مفاد پرست عناصر کی سازشوں کو ناکام بنائیں اور سکول کی ترقی اور بہتری کے لئے پرنسپل مِس کیری کے ساتھ دے کر اسکی حوصلہ افزائی کی جائیں۔ لینگ لینڈ سکول اینڈ کالج چترال کے دیگر تمام سرکاری اور نجی سکولوں کے مقابلے میں حد درجہ بہتر ہے۔اور یہ بہتری پرنسپل مِس کیری کی کاؤشوں کا نتیجہ ہے اور ہم مِس کیری کی خدمات کا اعتراف کرتے ہوئے اس کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں۔اُنہوں نے کہا کہ چترال کے عوام پرنسپل مِس کیری کی کارکردگی سے مکمل طورپر مطمئن ہیں۔


Print Friendly

JUI leader’s sawmill set ablaze

DROSH, April 23: A local JUI leader alleged that his sawmill in Kalkatal village near Drosh was put on fire last night.
fireTalking to this correspondent, Salahuddin Tofan said that when he reached the mill on Thursday morning the entire premises was surrounded by flames. Timber, furniture, finished good and all the machinery inside the factory turned in ashes. He said that it was a pre-planned activity by some unknown miscreant who had used petrol for the purpose. He estimated the loss was at least 4 million rupees. Salahuddin Tofan added that the miscreant had not only set on fire the factory but also attempted to kill his relative who was sleeping in the factory but luckily escaped the incident.
Hazratuddin, the one who was sleeping inside the factory, said that it was almost 1 AM when the incident took place. He said that there was no time to save any item. Fire brigade and local police immediately reached the scenario and we are thankful to them, added Mr Tofan. Both Tofan and Rehmatullah strictly ruled out the possibility of any electric short circuit and said that at the time of incident electricity was on and people turned off the electricity. They insisted this was a deliberate attempt. Salahuddin said that he and his family did not have any rivalries and they were peace loving people. He demanded inquiry of the incident and said it would be important for the peace of Chitral.


Print Friendly

Tributes paid to retiring doctor

Ali Murad copyBOONI, April 23: After rendering valuable services for over 30 year, Dr Ali Murad, the In-charge of the Tehsil Headquarters Hospital Booni retired from the government service.
In this regard, a farewell party was held on the premises of the Tehsil Headquarters Hospital in Booni. A large number of people from different walks of life, including friends and colleagues of the retiring doctor, participated in the function.
Among those who paid tribues to Dr Murad on the occasion for his services to the ailing humanity in the backward area were Member Provincial Assembly (MPA) from upper Chitral Sardar Hussain, Assistanat Commissioner Mastuj Minhasuddinand, Dr Sher Qayyum and a number of elders and notables of the area.–SN Peerzada


Print Friendly

Thinkers’ forum proposes environment protection measures

چترال تھنکرز فورم کا ماہانہ اجلاس آج پروفیسر سید شمس النظر کی صدارت میں ہوا۔ اجلاس میں پروفیسر غنی الرحمٰن نے مقالہ پیش کیا جس کا عنوان تھا “چترال کے ماحولیاتی مسائل”۔ انہوں نے مسئلے کے مختلف پہلؤں پر تفصیل سے روشنی ڈالی ۔

thimkerشرکاء نے مقالے کے تمام نکات پر ایک ایک کرکے بحث کی اور اپنی تجاویز دیں۔ تفصیلی بحث کے بعد چترال ٹاون کے اندر پیدا ہونے والے ہر قسم کے کچرے جیسے پلاسٹک، پیکنگ میٹیریل، ہوٹلوں، قصاب خانوں اورمرغی خانوں کے فضلے،گلے سڑے پھل اور سبزیوں نیز ہسپتالوں کے کچرے کو مناسب طریقے سے اور حفظان صحت کے اصولوں کے مطاابق ٹھانے لگانے کا بندوبست کیا جائے۔اس سلسلے میں بلدیاتی ادارے، انتظامیہ، محکمۂ صحت اور چترال کے آبی وسائل جیسے دریا، ندیوں ، نہروں، چشموں اور جھیلوں میں ہونے والی آلودگی کی روک تھام کے لیے۳۔ چترال میں نئی تعمیرات کے بے ہنگم سلسلے پر مناسب کنٹرول کیا جائے اور یہ یقینی بنایا جائے کہ نئی تعمیرات میں تمام سہولیات جیسے واش رومز، روشنی، ہوا کی آمد و رفت اور پارکنگ کا معیاری بندوبست کیا جائے۔ نیز پبلک مقامات۴۔ سڑکوں کی تعمیر اور مرمت کا کام جلدی سے مکمل کیا جائے تاکہ گرد و غبار کے نتیجے میں ہونے والی فضائی۵۔ عوام میں ماحولیاتی آگاہی اور صفائی کی عادت پیدا کرنے کے سلسلے میں تعلیمی ادارے اور این جی اوز اپنا کردارادا کریں۔ اجلاس میں جی ڈی لینگلینڈ سکول کی انتظامیہ کے اس فیصلے کو سراہا گیا جس کے تحت سکول کے اندر کھانے پینے کی اشیاء کی فروخت بند کردی گئی ہے۔ اجلاس نے مطابہ کیا کہ دیگر تعلیمی ادارے بھی اسی طرح کے اقدامات کریں جس سے نہ صرف بچے مضر صحت اشیاء سے محفوظ رہیں گے بلکہ ان کے پیکٹوں وغیرہ سے کچرا پیدا بھی۶۔ اجلاس میں دھواں اور شور ہیدا کرنے والی گاڑیوں پر پابندی کا مطالبہ کیا گیا۔ اس بات پر تشویش ظاہر کیا گیا کہ موٹرسائیکل سوار زیادہ شور پیدا کرنے کا باعث بن رہے ہیں جو رہائشی علاقوں، ہسپتالوں اور سکولوں کے ارد گرد تکلیف دہ ۷۔ اجلاس نے جنگلات کی بے دریع کٹائی سے پیدا ہونے والی صورت حال پر تشویش ظاہر کی اور مطالبہ کیا کہجنگلات کی حفاظت کے لیے مناسب قوانین اور پالیسیاں بنائی جائیں، نیز موجودہ قوانین پر سختی سے عملدرامد کو یقینی بنایا جائے۔ ۸۷۔ اجلاس نے ڈپٹی کمشنر چترال کے اس فیصلے کو سراہا جس کے تحت بالائی چترال کے چراگاہوں میں باہر سے بڑی تعداد میں جانور لانے پر پابندی لگادی گئی ہے۔ اجلاس نے مطالبہ کیا کہ پورے چترال میں چراگاہوں کےتحفط اور پائدار استعمال کو ممکن بنانے کے لیے تمام سٹیک ہولڈرز کو اعتماد میں لے کر قانون سازی کی جائے۔۸۔ اجلاس کے شرکاء نے عہد کیا کہ وہ ماحولیاتی آلودگی کو کم کرنے کے لیے اپنا کردار ادا کریں گے۔


Print Friendly